بائبل بد روح سے مغلوب ہونے / بد روح کے سائے سے مغلوب ہونے کے بارے کیا کہتی ہے ؟ اگر ایسا ہے تو اِس کی علامات کیا ہیں ؟




سوال: بائبل بد روح سے مغلوب ہونے / بد روح کے سائے سے مغلوب ہونے کے بارے کیا کہتی ہے ؟ اگر ایسا ہے تو اِس کی علامات کیا ہیں ؟

جواب:
بائبل بد روحوں سے مغلوب ہونے یا اِن کے زیرِ زثر ہونے کی چند مثالیں دیتی ہے ۔ اِن مثالوں میں سے ہم بد روح کے سائے کے زیرِ اثر ہونے کی چند مثالیں تلاش کر تے ہیں اور آگاہی حاصل کر تے ہیں کہ کس طرح ایک بد روح ایک آدمی کو مغلوب کر تی ہے ۔ یہاں پر بائبل کے چند پیرے دئے گئے ہیں : متی 17: 18، 12: 22، 9: 32۔33،مرقس 7: 26۔30، 5:1۔ 20، لوقا 22:3 ، اعمال 16: 16، 18۔ اِن پیروں میں چند یہ ہیں کہ بد روح کی مفلوبیت جسمانی بیماریوں کی وجہ بنتی ہے جیسا کہ گونگا پن ، مرگی کی علامات ، اندھا پن وغیرہ ہیں ۔ دوسری صورتوں میں یہ کسی کو بُراءی کرنے کہ وجہ بنتی ہے ۔ یہودہ اِس کی مرکزی شال ہے ۔ اعمال 16: 16۔18 میں روح ظاہری طور پر ایک غلام لڑکی کو غیب گوئی کی کچھ قابلیت دیتی ہے ۔ Gadarenes کا بد روحوں سے مغلوب آدمی جو کہ بد روح کے ایک بہت بڑے گروہ ( جمِ عفیر )سے مغلوب تھا ۔ انسانوں سے زیادہ مضبوط تھا اور مقبرے کے پتھروں کے درمیان میں ننگا رہتا تھا ۔ ساول بادشاہ خداوند کے خلاف بغاوت کرنے کے بعد ایک بُری روح سے ستانے کے تاثر کی مصیبت میں پڑا اور اُس نے داود کو قتل کرنے کی خواہش کو بڑھایا ۔ حالانکہ یہاں پر بد روح سے مغلوب ہونے کی ممکن علامات کا ایک وسیع مجموعہ ہے جیسا کہ جسمانی بگاڑ ہے جو کہ ایک حقیقی جسمانی مسئلے سے منسوب کیا جا سکتا ہے ۔ شخصیت میں بدلاو جیسا کہ دباو اور بڑھاو فطرتی طور تے زیادہ مضبوطی بے حیائی ، غیر معاشرتی رویہ اور غالبا ً معلومات کو بانٹنے کی اہلیت جو کہ کوئی بھی فطری طور پر جان نہیں سکتا ہے اِس کی وضاحت کرنا اہم ہے۔ قریب قریب سب ہی بلکہ اِن سب خصوصیات کی دوسری تشریحات ہو سکتی ہیں ۔ پس یہ اہم نہیں ہے کہ ہر دباو کا شکار آدمی یا مرگی کے مرض والا آدمی بد روح سے مغلو ب ہے ۔ دوسری طرف غالب امکان ہے کہ مغربی ثقافتیں سنجیدگی سے لوگوں کی زندگیوں میں شیطانی مداخلت نہیں کرتی ہیں ۔ اِن جسمانی اور جذباتی امتیازات میں اضافی طور پر ایک آدمی بد روح کے سایہ کے زیرِ اثر ہونے کو روحانی نقطہ نظر سے بھی دیکھ سکتا ہے اَن میں معافی سے انکار اور ( کرنتھیوں 2: 10:11) غلط عقائد پھیلانے میں ایمان رکھنا ۔ خاص طور پر یسوع مسیح اور اُن کے کفارے کے بارے میں ( 2 کرنتھیوں 11: 3 4، 13 ۔15، 1 تیمتھیس 4: 1۔5 ، 1 یوحنا 4: 1۔3) ۔

مسیحیوں کی زندگیوں میں بد روحوں کی مداخلت سے متعلق پطرس رسول حقیقت کی ایک وضاحت بیان کرتا ہے ۔ ایک ایماندار شیطان کے زیر اثر ہو سکتا ہے ( متی 16: 23) ۔ بعض مسیحیوں کا حوالہ دیتے ہیں جو کہ مستحکم بد روح کے سایہ کے زیر اثر " بد روحوں کے زیر ِ اثر" ہونے کے طو ر پرہیں ۔ لیکن کلام میں مسیح میں ایک ایماندار کی ایک بد روح کے سایہ کے زیرِ اثر ہونے کی ایک بھی مثال نہیں ہے ۔ زیادہ تر مذہبی مبلغ ایمان رکھتے ہیں کہ ایک مسیحی بد روح کے زیر ِ اثر نہیں ہو سکتا ہے کیونکہ اُس میں روح القدس رہتا ہے (2 کرنتھیوں 1 : 22، 5: 5 ، 1 کرنتھیوں 6: 19) اور خدا کی روح ایک بد روح کے ساتھ اپنی سکونت نہیں بانٹ سکے گی ۔ ہمیں یہ ٹھیک ٹھیک نہیں بتایا گیا ہے کہ کس طرح کوئی اپنے آپ کو زیرِ اثر ہونے کے لیے کھولتا ہے ۔ اگر یہودہ کا معاملہ نمائندہ کے طور پر ہے ، اُس نے بُرائی کے لیے اپنے دل کو کھولا اِس کے معاملہ میں اِس کے لالچ کی بدولت ایسا ہوا ( یوحنا 12 : 6 ) ۔ پس یہ ممکن ہو سکتا ہے کہ اگر کوئی اپنے دل پر چند عادتاً گناہوں کو حکمرانی کرنے کی اجازت دیتا ہے تو یہ ایک بد روح کے داخل ہونے کے لیے دعوت بن جاتا ہے ۔ تبلیغی اداروں میں سے تجربات سے بد روحوں سے مغلوب ہونا کافر بُتوں کی پرستش اور علم ِ نجوم کا مواد رکھنے سے متعلقہ بھی دکھائی دیتا ہے ۔ کلام بار بار بتوں کی پرستش کو حقیقی طور پر بد روح کی پرستش سے جوڑتا ہے ( احبار 17 : 7 ، استثنا 32 : 17 ، زبور 106: 37 ، 1 کرنتھیوں 10: 20) ، پس یہ حیران کُن نہیں ہونا چاہیے کہ یہ بتوں کی پوجا کی مداخلت بد روح کی غالب آنے کی طر ف لے جا سکتی ہے۔

اوپر دئے گئے کلام کے حوالہ جات اور مبلغین کے چند تجربات کی بنیاد پر ہم یہ نتیجہ اخذ کر سکتے ہیں کہ بہت سارے لوگ کچھ گناہ قبول کرنے کے وسیلہ سے یا پوجا میں اُلجھنے کے سبب سے اپنی زندگیوں کو بد روح کی مُشکلات کے لیے کھول دیتے ہیں ۔ مثالوں میں ، بد اخلاقی ، نشہ آور ادویات / شرا ب نوشی کی لعنت جو کہ کسی کی شعوری حالت کو تباہ کر دیتی ہے ، بغاوت ، عداوت اور وجدانی مراقبہ شامل ہیں ۔

یہاں پر ایک اخلاقی تفکر موجود ہے ۔ شیطان اور اُس کی مہمان بُرائی کچھ نہیں کر تی جو خداوند اُسے کرنے کی اجازت نہیں دیتا ہے ( یعقوب 1 : 2 ) اِس معاملے میں رہتے ہوئے شیطان سوچتا ہے کہ وہ اپنا مقصد پورا کر رہا ہے ، حقیقت میں خدا کا پاک مقصد پورا کر رہا ہوتا ہے ، جیسا کہ یہوداہ کے گمراہ ہونے کے معاملے میں ہے ۔ کچھ لوگ علم غیب اور بد روحوں کی سرگرمیوں کے ساتھ ایک غیر صحت مندانہ سحر کو وابسطہ کر لیتے ہیں ۔ یہ غیر دانشمندانہ اور بائبل کے مطابق نہیں ہے ۔ اگر ہم خدا کے متلاشی ہیں ، اگر ہم اپنے آپ کو اُس کی فولادی زرہ میں لپٹے رکھتے ہیں اور اُس کی مضبوطی پر انحصار کر تے ہیں ( افسیوں 6 : 10 ۔18) ،ہم بُرے لوگوں سے ڈرنے کی ضرورت نہیں ہے ، کیونکہ خدا سب پر حکمرانی کرتا ہے۔



واپس اردو زبان کے پہلے صفحے پر



بائبل بد روح سے مغلوب ہونے / بد روح کے سائے سے مغلوب ہونے کے بارے کیا کہتی ہے ؟ اگر ایسا ہے تو اِس کی علامات کیا ہیں ؟